میرپور صحافتی نتظیموں کا ایک اخبار کے خلاف شدید احتجاج، حکومت سے نوٹس لینے کا مطالبہ۔

میرپور (ڈبلیو این این) جمعرات کے روز آزاد کشمیر کی صحافتی تنظیموں کے اجلاس میں روزنامہ خبریں نامی اخبار میں آزادکشمیرکے ایک تین سال قبل وفات پاجانیوالے صحافی سمیت دیگر کے خلاف توہین آمیز اشتہار کی اشاعت کو قابل مذمت قرار دیتے ہوئے مطالبہ کیا ہے کہ مذکورہ اخبار کو آزادکشمیر میں میڈیا لسٹ سے خارج کر کے اس سرکاری اشتہارات بند کیے جائیں۔مرکزی ایوان صحافت میں منعقدہ اجلاس میں سابق صدر سینٹرل پریس کلب ابرار حیدر، پریس فار پیس کے کورآڈی نیٹر امیر الدین مغل، آزاد جموں وکشمیر یونین آف جرنلسٹس کے قائم مقام صدر سعید الرحمان صدیقی، ٹی وی جرنلسٹس ایسو سی ایشن کے صدر آصف رضا میر اور سینٹرل پریس کلب کے سیکرٹری جنرل اشفاق شاہ‘ ہارون مظفرقریشی اور دیگر شریک ہوئے۔ صحافیوں کی تنظمیوں کے ان نمائندگان نے الزام عائد کیا ہے کہ اخبار آزادکشمیر کے آمدہ الیکشن سے قبل نمائندگان پر سیاسی جماعتوں سے اشتہار لینے کے لیے دباو ڈال رہے ہیں اور انکار پر انہیں توہین آمیز طریقے سے نکال کر سیاسی جماعتوں کے کارکنوں اور سرمایہ داروں کو نمائندہ مقرر کیا جا رہا ہے جو صحافتی اصولوں کے یکسر خلاف ہے۔ ان کے بقول: ‘روزنامہ خبریں نامی اس اخبار کی شہرت اس حوالے سے پہلے بھی اچھی نہیں۔ اخبار کا ڈیکلیریشن مظفرآباد سے جاری ہوا مگر یہاں ان کا کوئی دفتر ہے اور نہ ہی اخبار یہاں سے تیار ہوتا ہے۔ اخبار ہر چھ ماہ بعد اپنے نمائندگان اور بیوروچیف کو تنخواہ ادا کیے بغیر فارغ کر دییا ہے۔ اس اخبار نے جعلی اے بی سی لے رکھی ہے کم از کم تنخواہ اور اشتہارات کو تنخواہوں سے مشروط کرنے کے قانون پر کبھی عمل نہیں کیا۔تاہم اس مرتبہ تو توہین آمیز اشتہار شائع کرکے تمام حدیں عبور کر لی ہیں۔ اجلاس میں اس بات کی شدید مزمت کی گئی کہ چکسواری سے تعلق رکھنے والے شبیر رچیال جو پہلے تین سال قومے میں رہے پھر ان کو فوت ہوئے بھی تین سال گزر چکے ان کا بھی نا قص کارکردگی پر فراغت کا اشتہار شائع کیا گیا جو کہ انتہائی گھٹیا حرکت ہے۔دریں اثنا ء اس ضمن میں قانونی پہلووں سمیت دیگر اقدامات کیلئے تمام صحافتی تنظیمو ں کے نمائندگا ن پر مشتمل کمیٹی قائم کردی گئی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں